تنظیم علی کانگریس کی صدارت میں مختلف مذاہب کے سماجی کارکنوں نے چہلم کے جلوس کا انتظام کرنے کے لئے لکھنؤ انتظامیہ سے مطالبہ کیا ۔     

0
83

کربلا کی یادگار ہمیں حق اور انصاف کے لئے ہر  قربانی پیش  کی ترغیب و تعلیم  دیتی ہے۔  ہمارے ملک میں ، محرم اور صفر (چہلم) کے مہینے میں کربلا کی یاد میں   اٹھائے جانے والے جلوس ، خاص طور پر لکھنؤ ، اودھ کے جلوس ، نہ صرف ملک کے ایک مذہبی برادری کی مذہبی   روایت ہی نہیں  بلکہ ملک کا ثقافتی ورثہ بھی ہیں۔  اس سال کرونا وائرس کے وبا کی وجہ سے ، محرم کے مہینے میں کوئی جلوس نہیں اٹھایا جا سکا تھا۔  لیکن اب جب ہر کام کا نظام اپنی صورتحال پر واپس آرہا ہے ، بازاریں کھلی ہوئی ہیں ، ٹریفک جاری ہے ، امتحانات  منعقد ہو رہے ہیں ، ایسی صورتحال میں چیہلم کا جلوس بھی سوشل ڈسٹنسینگ  اور دیگر احتیاطی تدابیر کے ساتھ  اٹھویا جاسکتا ہے۔

اسی سلسلے  میں ، تنظیم علی کانگریس کی زیر صدارت مختلف طبقوں اور مذاہب کے کئی  سماجی کارکنوں اور  معزز شہریوں کے ذریعہ سٹی مجسٹریٹ کو ایک میمورنڈم پیش کیا گیا ، جس میں درخواست کی گئی ہے کہ وہ تمام احتیاطی تدابیر کے مطابق مناسب فیصلہ کریں اور چہلم کے جلوس کا اہتمام کریں تاکہ عقیدت مند عوام کو اطمینان حاصل ہو سکے۔  مطالبہ کرنے والوں میں  سینئر ایڈوکیٹ سید حسین عباس رضوی ، ایڈوکیٹ عسکری انور ، حسین رضوی ایڈوکیٹ ، سید ظہیر حسین ایڈوکیٹ ، سماجی کارکن عمران احمد ،جناب طاہر نقوی،  جناب احسن نقوی،  جناب عباس نقوی،  علی کانگریس کے صدر محترمہ روبینہ جاوید مرتضیٰ ، جناب  بہار اختر زیدی ، ڈاکٹر انوپ کمار ، ڈاکٹر درگش سونکر، جناب ریحان انصاری ، جناب لوی نواب ، مصنف اور سماجی کارکن جناب ایس این لال ، سماجی کارکن جناب امداد امام ، جناب  مسعود رمزی ، شبیر خان ، مرزا ضیاء الدین بخش ، ڈاکٹر درگش سونکر ، ڈاکٹر آکاش وکرم، ڈاکٹر انوپ کمار کے نام شامل ہیں ۔

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here